بھویہ لال کے پاس انجینئرنگ اور خلائی ٹیکنالوجی کا طویل تجربہ ہے۔ وہ سال 2005 سے لے کر 2020 تک آئی ڈی اے، ایس ٹی پی آئی میں بطور ریسرچ اسٹاف کام کر چکی ہیں۔

2 فروری 2020(سیدھی بات نیوز سرویس) امریکہ کے نئے صدر جو بائڈن کی انتظامیہ نے امریکی خلائی ایجنسی ناسا میں تبدیلی کے کام کو دیکھنے کی ذمہ داری ہند نژاد امریکی بھوّیہ لال کے سپرد کی ہے۔ انھیں ناسا کا کارگزار صدر مقرر کیا گیا ہے۔ ناسا نے کہا ہے کہ ’’ناسا میں وہائٹ ہاؤس کے ایک سینئر افسر کے طور پر تقرر کی گئیں بھوّیہ ایجنسی کے لیے بائڈن پریسیڈنشیل ٹرانزیشن ایجنسی ریویو ٹیم کے ایک رکن کی شکل میں کام کریں گی۔‘‘یہاں قابل ذکر ہے کہ بھوّیہ لال کے پاس انجینئرنگ اور خلائی ٹیکنالوجی کا طویل تجربہ ہے۔ وہ سال 2005 سے لے کر 2020 تک انسٹی ٹیوٹ فار ڈیفنس اینالیسس (آئی ڈی اے) اور سائنس اینڈ ٹیکنالوجی پالیسی انسٹی ٹیوٹ (ایس ٹی پی آئی) میں بطور ریسرچ اسٹاف کام کر چکی ہیں۔ ایس ٹی پی آئی میں شامل ہونے سے پہلے وہ سی-یس ٹی پی ایس، ایل ایل سی سربراہ کی شکل میں بھی کام کر چکی ہیں۔ یہ میساچوئٹس کے والتھم واقع ایک سائنس اینڈ ٹیکنالوجی ریسرچ اینڈ کنسلٹنگ فرم ہے۔بھوّیہ لال اس سے قبل کیمبرج کے اے بی ٹی ایسو سی ایٹس اِنک میں سنٹر فار سائنس اینڈ ٹیکنالوجی پالیسی اسٹڈیز کی ڈائریکٹر کے طور پر بھی اپنی خدمات دے چکی ہیں۔ بھوّیہ نے بین الاقوامی سمینار نیوکلیئر اینڈ ایمرجنگ ٹیکنالوجی اِن اسپیس میوزیم کے ساتھ خلائی تاریخ اور پالیسی پر ایک سمینار سیریز کا مشترکہ انعقاد بھی کر چکی ہیں۔ خلائی شعبہ میں ان کے تعاون کو دیکھتے ہوئے انھیں انٹرنیشنل اکیڈمی آف ایسٹروناٹس کی ایک کنورسیشنل ممبر کی شکل میں نامزد کیا گیا اور وہ سلیکٹ ہوئیں۔بھوّیہ لال نے میساچوئٹس انسٹی ٹیوٹ آف ٹیکنالوجی سے سائنس میں گریجویشن اور نیوکلیئر انجینئرنگ میں پوسٹ گریجویشن کی تعلیم حاصل کی ہے اور ساتھ ہی ٹیکنالوجی اور پالیسی میں ماسٹر آف سائنس کی ڈگری بھی لی ہے۔ علاوہ ازیں انھوں نے جارج واشنگٹن یونیورسٹی سے پبلک پالیسی اینڈ پبلک ایڈمنسٹریشن میں ڈاکٹریٹ کی ڈگری بھی حاصل کی ہے۔

(قومی آواز)

SHARE

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here