بار ہ ربیع الاول کو بنگلوربھرمیں برداران وطن میں تقسیم ہوگی مٹھائی اور پھر سیرت کی کتابیں:

بنگلور: 24اکتوبر (سیدھی بات نیوز سرویس)حضرت مولانا مفتی شعیب اللہ صاحب صرف شہر بنگلور کے ہی نہیں بلکہ ملکِ ہند کی مقبول علمی وفکری شخصیت ہیں،اُمت کے تئیں مفتی صاحب کا درد بار بار ان کے مجالس میں نکل کر سامنے آتاہے،ایسے حالات میں مولانا کے مشوروں پرعمل کرنااور ان کے درد کو ایک تحریک کی شکل دینا بہت ضروری ہے؛ان باتوں کا اظہار آج سیدھی بات فاؤنڈیشن کی جانب سے دفتر سیدھی بات میں منعقدہ مختلف علماء کرام کے سامنے بانی سیدھی بات فاؤنڈیشن انصارعزیزندوی نے کیا،۔انہوں نے حالیہ محترم مفتی صاحب نے اپنی مجلس میں بار ہ ربیع الاول کے دن برادرانِ وطن میں مٹھائی تقسیم کے ساتھ ساتھ سیرت کی کتابوں کو عام کرنے کا جو مشورہ دیا تھا اس پر عمل کرنے کا فیصلہ کرتے ہوئے اس پر لائحہ عمل تیار کرنے کی بات کہی:اس اجلاس میں موجود علماء کرام نے یہ طئے کیا کہ ہنگامی حالات میں بلائی گئی اس میٹنگ میں ا مسال شہر بنگلور سے آغاز کریں گے، اور پھر اگلے سال تک یہ تحریک پورے کرناٹک اور ملک بھر میں کیسے پھیلائی جائے اس پر غوروخوص کرتے ہوئے لائحہ عمل تیار کریں گے؛ انشاء اللہ بارہ ربیع الاول کو سیدھی بات فاؤنڈیشن ایک ہزار سے زائد سیرت کی کتابیں مفت برادران وطن میں مٹھائی کے ساتھ بانٹنے کا فیصلہ کیا ہے:جو انگریزی اور کنڑا پر مشتمل ہوں گی، بروز جمعہ صبح دس بجے دفتر سیدھی بات میں اس کی افتتاحی نشست ہوگی جس میں بنگلور کے موقر علماء کرام کی شرکت ہوگی اور پھر دعائیہ کلمات کے ساتھ مختلف ٹیمیں شہر بھر میں پھیل جائیں گی، چونکہ جمعہ کا دن ہے اذان سے پہلے مختلف مقرر کردہ علاقوں میں پہنچا لازمی ہے: اس سلسلہ میں ایک منظم منصوبہ بند لائحہ عمل تیار کرنے کے لئے بروز بدھ کو ایک اور میٹنگ دفتر سیدھی بات میں منعقد کی گئی ہے، ظہرانے کے بعد یہاں فائنل لائحہ عمل تیا ہوگا کہ کن پولس تھانوں میں اور شہر کے کن مشہور سرکل میں ٹینٹ لگائیں جائیں اور تقسیم آوری کی کارروائی کو کس طرح انجام دیا جائے: ہماری اس تحریک میں کوئی شریک ہونا چاہتاہے تو ضرور شریک ہوں اور ادارہ سیدھی بات سے رابطہ کریں: اس اجلاس میں مولان سمعی اللہ رفاعی ندوی صاحب، مولانا سمیر بیگ ندوی صاحب، حافظ ظہیر صاحب، مولانا مفتی عمر فاروق صاح، مولانا سعید باقوی صاحب، مولانا یوسف بیگ ندوی قاسمی صاحب، مولانا عرفان مظاہری صاحب، مولانا ندیم ندوی صاحب، محترم جناب ارشاد صاحب کنگیری، حافظ ظاہر صاحب، کاویری ندوی، وغیرہم موجود تھے: نشست مختلف آراء و مشوروں کے بعد دعائیہ کلمات کے ساتھ اختتام پذیر ہوئی:

SHARE

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here