15 اگست 2020(سیدھی بات نیوز سرویس) یمن میں سرکاری فوج نے جمعے کے روز الجوف صوبے میں واقع خب الشعف ضلع اور صنعاء کے مشرق میں واقع نہم ضلع میں متعدد ٹھکانوں کو آزاد کرا لیا۔ یہ پیش رفت باغی حوثی ملیشیا کے ساتھ شدید لڑائی کے بعد سامنے آئی۔یمن کی مسلح افواج کے میڈیا مرکز نے ایک بیان میں بتایا کہ قومی فوج نے عوامی مزاحمت کاروں کی معاونت سے خب الشعف ضلع میں الصبایغ، برق الخیل اور دیگر ٹھکانوں کو مسلسل دوسرے روز کی لڑائی کے بعد آزاد کرا لیا۔ بیان کے مطابق اس گھمسان کی لڑائی میں حوثی ملیشیا کے درجنوں ارکان ہلاک اور زخمی ہوئے۔ العلم کے محاذ سے حوثی ملیشیا کے جتھوں کے فرار ہونے کے بعد ابھی تک وہاں متعدد کٹی پھٹی لاشیں پڑی ہیں۔ یمنی فوج کے توپ خانوں نے متعدد ٹھکانوں پر حوثیوں کے جتھوں اور کمک کو نشانہ بنایا۔ اس کے نتیجے میں ملیشیا کے جنگجو ہلاک ہوئے اور ان کی عسکری گاڑیاں اور لڑائی کا ساز و سامان تباہ ہو گیا۔ جمعے کے ہی روز یمنی فوج نے صنعاء کے مشرق میں واقع ضلع نہم میں نئی پیش قدمی کو یقینی بنایا۔ اس سے قبل فوج نے علاقے میں ایرانی نواز حوثی ملیشیا کے مورچہ بند ٹھکانوں پر وسیع حملہ کیا تھا۔ یمنی فوج کی سرکاری ویب سائٹ کے مطابق سرکاری فورسز نے تزویراتی اہمیت کے حامل متعدد ٹھکانوں کو آزاد کرا لیا۔ ان میں الدخیل، العلق اور الرمات کے پہاڑی سلسلوں کے علاوہ شنان، الاغر اور الدشوش کے علاقے شامل ہیں۔ مزید برآں قومی فوج کے توپ خانوں اور عرب اتحاد کے لڑاکا طیاروں نے اسی محاذ پر حوثی ملیشیا ککے ٹھکانوں اور کمک کو نشانہ بنایا۔ اس دوران درجنوں باغی ہلاک اور زخمی ہوئے اور متعدد فوجی گاڑیاں تباہ ہو گئیں۔

(العربیہ)

SHARE

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here