اسد الدین اویسی نے وزیراعظم نریندر مودی کے پانچ اگست کو ایودھیا میں رام مندر بھومی پوجن میں شرکت کرنے پر اعتراض کرتے ہوئے اسے آئینی طور پر حلف برداری کی خلاف ورزی قرار دیا ہے۔

نئی دہلی:28جولائی 2020(سیدھی بات نیوز سرویس)  آل انڈیا مجلس اتحاد المسلمین (اے آئی ایم آئی ایم) کے صدر اور رکن پارلیمنٹ اسد الدین اویسی نے وزیراعظم نریندر مودی کے پانچ اگست کو ایودھیا میں رام مندر بھومی پوجن میں شرکت کرنے پر اعتراض کرتے ہوئے اسے آئینی طور پر حلف برداری کی خلاف ورزی قرار دیا ہے۔ حیدرآباد کے رکن پارلیمنٹ اویسی نے پیر کو وزیر اعظم دفتر سے خطاب کرتے ہوئے ٹوئٹ کیا کہ ’’وزیراعظم کا سرکاری طور سے بھومی پوجن پروگرام میں شرکت کرنا ان کے آئینی طورسے حلف برداری کی خلاف ورزی ہوگی۔ سیکولرزم آئین کے بنیادی ڈھانچے کا حصہ ہے۔‘‘ اسد الدین اویسی نے مزید لکھا کہ ’’ہم اس بات کو نہیں بھول سکتے ہیں کہ بابری مسجد 400 برسوں تک ایودھیا میں کھڑی تھی اور 1992 میں اسے بدمعاشی پر اتاؤلی ایک بھیڑ نے منہدم کر دی تھی۔ وزیر اعظم نریندر مودی پانچ اگست کو ایودھیا میں رام مندر کی بھومی پوجن کے ہونے والے پروگرام میں شرکت کرنا طے ہے۔ کانگریس لیڈر دگ وجے سنگھ بھومی پوجن کے وقت کے سلسلے میں اعتراض کرچکے ہیں۔ وزیر اعظم نریندر مودی 5 اگست کو ایودھیا میں رام مندر بھومی پوجن میں شرکت کریں گے۔وزیر اعظم نریندر مودی 5 اگست کو ایودھیا میں رام مندر بھومی پوجن میں شرکت کریں گے۔ واضح ہے کہ رام مندر کی تعمیر کے لئے پانچ اگست کو ہونے والے بھومی پوجن کو روکنے کے لئے الہ آباد ہائی کورٹ میں ایک عرضی بھی داخل کی گئی تھی، جسے مسترد کردی گئی ہے۔ مہاراشٹر کے ساکیت گوکھلے کی جانب سے داخل کی گئی عرضی کو خارج کرتیہوئے ہائی کورٹ نے کہا تھا کہ ہم ریاستی حکومت اور منتظموں سے امید کرتے ہیں کہ سماجی دوری اور سبھی پروٹوکول کی پیروی کی جائے گی۔ ساکیت گوکھلے نے الہ آباد ہائی کورٹ میں داخل کی گئی عرضی میں کہا تھا کہ بھومی پوجن کووڈ۔19 کے ان لاک۔ 2 کی ہدایات کے خلاف ورزی ہے۔ قابل ذکر ہے کہ وزیر اعظم نریندر مودی 5 اگست کو ایودھیا میں رام مندر بھومی پوجن میں شرکت کریں گے۔

نیوز18

SHARE

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here