قومی ترانہ قانونی بل پر بحث سے قبل اسمبلی کی عمارت کے سامنے احتجاجی مظاہرہ، ناقدین کے خیال میں آزادی اظہار پر ضرب کی حیثیت رکھتا ہے

27 مئی 2020(سیدھی بات نیوز سرویس) ہانگ کانگ میں قومی ترانہ قانونی بل پر بحث سے قبل اسمبلی کی عمارت کے سامنے احتجاجی مظاہرہ کیا گیا۔ پولیس نے مظاہرین کو منتشر کرنے کے لئے آنسو گیس کا استعمال کیا۔ قومی ترانہ بِل، چین کے قومی ترانے کی توہین کرنے پر سزا پر مبنی ہے اور ناقدین کے خیال میں بِل شہر میں آزادی رائے پر ضرب کی حیثیت رکھتا ہے۔ تاہم بیجنگ انتظامیہ کا موقف ہے کہ یہ فیصلہ محب وطن روح اور ملک کی سوشلسٹ بنیاد جیسی اقدار کو جامعیت عطا کرے گا۔ قانونی بِل کی رُو سے قومی ترانے کی توہین کرنے والے کو 6 ہزار 450 ڈالر تک جرمانہ کیا جا سکے گا۔ چین حکومت نے نومبر 2017 میں ملک کے قومی ترانے کی توہین و تحقیر کرنے والے کے لئے 15 روزہ حراست، ایک سے 3 سال تک کی سزائے قید اور سیاسی حقوق کی سلبی جیسی سزاوں پر مبنی قانونی بِل کی منظوری دی تھی۔ مذکورہ قانون ہانگ کانگ میں غیر ملکی ٹیموں کے ساتھ فٹبال میچوں کے دوران فریقین کے چینی قومی ترانے پر آوازے کسنے کے بعد منظور کیا گیا اور اسے ہانگ کانگ اور مکاو خود مختار علاقے میں نافذ کیا گیا تھا۔ واضح رہے کہ “رضا کاروں کی مارچ” نامی قومی ترانہ 1949 میں قومی ترانے کے طور پر قبول کیا گیا تھا۔

(ٹی آر ٹی)

SHARE

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here