11جون 2019(سیدھی بات نیوز سروس/ زرائع)امریکی وزارت دفاع (پینٹاگان) نے منگل کے روز اعلان کیا ہے کہ اس نے ریاست ایریزونا کے ایک امریکی فضائی اڈے میں ترک ہوابازوں کی F-35 طیاروں پر تربیت کا سلسلہ روک دیا ہے۔یہ پیش رفت ایسے وقت میں سامنے آئی ہے جب امریکا اس جدید ترین لڑاکا طیارے کے پروگرام میں انقرہ کی شرکت کو ختم کر رہا ہے۔ امریکی اقدام کی وجہ یہ ہے کہ ترکی روس سےS-400 فضائی دفاعی نظام خریدنے کا ارادہ رکھتا ہے۔پینٹاگان کے ترجمان لیفٹننٹ کرنل مائیک اینڈروز کے مطابق ترکی کی پالیسی میں تبدیلی کے بغیر F-35 طیاروں کے پروگرام میں اس کی شرکت ختم کرنے کے لیے کام جاری رکھا جائے گا۔پینٹاگان نے رواں سال اپریل کے اوائل میں اعلان کیا تھا کہ وہ ترکی کو امریکی F-35 لڑاکا طیاروں سے متعلق ساز و سامان کی تمام کھیپوں کی حوالگی معلق کر دے گا۔ اس کا مقصد روسی S-400 میزائل نظام حاصل کرنے کے حوالے سے انقرہ کی حوصلہ شکنی کرنا ہے۔پینٹاگان ترجمان کا کہنا ہے کہ S-400 سسٹم کی وصولی روک دینے سے متعلق ترکی کے واضح فیصلے کے انتظار میں ترکی میں F-35 طیاروں کی حوالگی اور اس کے استعمال کو ممکن بنانے سے مربوط تمام سرگرمیاں معطل کر دی گئی ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ امریکا انقرہ کو روسی S-400 نظام کی خریداری کے منفی نتائج سے خبردار کرتا آ رہا ہے۔ یہ عمل F-35 پروگرام میں ترکی کی شرکت کے سلسلے کو خطرے میں ڈال دے گاْیاد رہے کہ نیٹو اتحاد کے ارکان امریکا اور ترکی کے درمیان مذکورہ روسی میزائل سسٹم کی خریداری کے حوالے سے کئی ماہ سے تنازع چل رہا ہے۔ واشنگٹن کا کہنا ہے کہ یہ سسٹم نیتو کے زیر انتظام دفاعی نیٹ ورک سے موافقت نہیں رکھتا۔اس سے قبل امریکا دھمکی دے چکا ہے کہ روس سے S-400 میزائل شکن دفاعی سسٹم خریدنے کی صورت میں واشنگٹن اور انقرہ کے درمیان تعلقات پر “خطرناک نتائج” مرتب ہوں گے۔

SHARE

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here