کابل:15اپریل 2019(سیدھی بات نیوز سروس/ زرائع) شورش زدہ افغانستان کے مشرقی صوبہ لغمان میں مارٹر کے دھماکے سے کم ازکم 7 بچے ہلاک اور 10 زخمی ہوگئے۔خبررساں ایجنسی اےایف پی کے مطابق صوبہ لغمان کے گورنر اسد اللہ نے بتایا کہ تحقیقات کی جاری ہے کہ بچوں کو مارٹر بم کیسے ملا اور کیوں پھٹا؟ انہوں نے بتایا کہ جاں بحق اور زخمی ہونے والے تمام بچوں کی عمریں 15 برس سے کم ہیں۔صوبائی اسپتال کے سربراہ عبدالمعروف جیلانی نے بتایا کہ اسپتال میں 7 لاشیں اور 10 زخمی بچوں کو لایا گیا۔ان کا کہنا تھا کہ صوبہ لغمان کے دارالحکومت مھترلام کے مضافات میں مارٹر بم پھٹا۔ اس سے قبل 22 دسمبر کو افغانستان کے شمالی صوبے فریاب میں ایک بم دھماکے کی زد میں آکر تقریباً 8 بچے جاں بحق اور 6 زخمی ہو گئے تھے۔5 سے 12 سال کی عمر کے بچے کھیل رہے تھے جب بم پھٹ گیا۔ افغان ترجمان نے الزام لگایا تھا کہ طالبان صوبہ کے مختلف حصوں میں افغان سیکورٹی فورسز کو نشانہ بنانے کے لئے روڈ پر بم نصب کرتے ہیں۔خیال رہے کہ اقوام متحدہ مائن ایکشن سروس کے مطابق 2017 میں افغانستان کے اندر بارودی سرنگ کی زد میں آکر ہرمہینے مجموعی طور پر تقریباً 150 افراد جاں بحق اورزخمی ہوئے تھے۔واضح رہے کہ 80 کی دہائی میں سوویت روس افغان جنگ کے دوران روس نے متعددعلاقوں میں بارودی سرنگ بچھادی تھی بعدازاں 90 کی دہائی میں طالبان اور افغان حکومت کے مابین لڑائی کے نتیجے میں دیسی ساختہ بم استعمال کرنے کا رحجان بڑھ گیا تھا۔

SHARE

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here